پاکستان

پاکستان کا بی بی سے احتجاج

شیئر کیجئے

اسلام آباد: بے بنیاد اور یکطرفہ خبروں پر حکومت پاکستان نے برطانوی نشریاتی ادارے بی بی سی سے باضابطہ احتجاج کیا ہے۔

وزارت اطلاعات ونشریات کی جانب سے دوجون کی خبر پر انیس صفحات پر مشتمل احتجاجی ڈوزیئر بی بی سی نمائندے کے حوالے کردیا گیا ہے۔ احتجاجی ڈوزیئر میں کہا گیا ہے کہ دو جون کو شائع ہونے والی خبر صحافتی اقدار کے خلاف اور من گھڑت تھی۔ خبر میں فریقین کا موقف نہیں لیا گیا جو کہ بی بی سی کی ادارتی پالیسی کے خلاف ہے۔

پالیسی کے خلاف ہے۔

ڈوزیئر کے مطابق بغیر ثبوت خبر شائع کر کے ریاست پاکستان کے خلاف سنگین الزام تراشی کی گئی۔ تجزیے سے واضح ہوتا ہے کہ خبر میں جانبداری کا مظاہرہ کیا گیا اور حقائق کو بھی توڑ مروڑ کر پیش کیا گیا۔

ڈوزیئر کے مطابق خبر میں حتمی نتائج کا اخذ کرنا غیرجانبدار اور معروضی صحافت کے خلاف ہے۔ خبر کا تفصیلی تجزیہ علیحدہ مراسلے میں ارسال کیا جارہا ہے۔ حکومت پاکستان کو امید ہے کہ خبر کے ذمہ داروں کے خلاف کارروائی ہوگی۔ بی بی سی معافی مانگ کر متعلقہ خبر اپنی ویب سائٹ سے ہٹائے۔

ڈوزیئر کے مطابق امید ہے کہ آئندہ پاکستان مخالف جعلی خبروں کی اشاعت سے اجتناب کیا جائے گا۔ ایکشن نہ لیا گیا تو پاکستان اور برطانیہ میں تمام قانونی چارہ جوئی کا حق محفوظ رکھتے ہیں۔

احتجاجی مراسلہ برطانیہ میں میڈیا کے ریگولیٹری ادارے کو بھی بھجوایا جائے گا۔

loading...

متعلقہ مضامین

Close
Close